51 total views, 2 views today

عموماً یہ مرکب ’’عَشرِ عَشیر‘‘ پڑھا جاتا ہے۔
فرہنگِ آصفیہ اور نوراللغات دونوں کے مطابق دُرست تلفظ ’’عُشرِ عَشیر‘‘ ہے جب کہ معنی ’’دسویں حصے کا دسواں حصہ‘‘، ’’1/100‘‘، (کنایتاً) ’’قدرے‘‘، ’’قلیل‘‘ اور ’’ذرا سا‘‘ کے ہیں۔




تبصرہ کیجئے