374 total views, 1 views today

21 جنوری کو سلطان عبد الحمید اول “سلطنت عثمانیہ” کے تخت پر بیٹھ گئے۔
وکی پیڈیا کی تحقیق کے مطابق عبد الحمید اول (20 مارچ 1725ء تا 7 اپریل 1789ء) سلطنت عثمانیہ کے ستائیسویں سلطان تھے۔
تحقیق کے مطابق عبد الحمید نے اپنی زندگی کے ابتدائی 43 سال کا بیشتر عرصہ حرم میں گزارا۔ سلطان بغاوت کے خطرے کے پیش نظر شہزادوں کو حرم میں قید کر دیا کرتے تھے۔ انہوں نے اپنی ابتدائی تعلیم والدہ رابعہ شرمی سلطان سے حاصل کی، جنہوں نے عبد الحمید کو تاریخ اور خطاطی کے علوم سکھائے۔
تحقیق کہتی ہے کہ حرم کی مقید زندگی گزارنے کے باعث عبد الحمید ریاستی معاملات پر کوئی گہری نظر نہیں رکھتے تھے اور اس طرح مشیروں کے رحم و کرم پر رہ گئے۔ البتہ حرم کی تربیت نے انہیں بہت مذہبی اور امن پسند طبیعت دی۔
ان کی حکومت کے آغاز کے اگلے ہی سال سلطنت عثمانیہ کو جنگ کولویا میں بدترین شکست کا سامنا کرنا پڑا جس کے باعث اسے 1774ء میں ذلت آمیز معاہدہ کوچک کناری پر دستخط کرنا پڑے جو اس کے زوال کے آغاز کی واضح دلیل تھی۔اپنی تمام تر ناکامیوں کے باوجود عبد الحمید اول کو سب سے رحم دل عثمانی سلطان تسلیم کیا جاتا ہے ۔ ان کی مذہبی طبیعت کے باعث لوگ انہیں “ولی” کہا کرتے تھے۔




تبصرہ کیجئے