115 total views, 3 views today

معلوماتِ عامہ کی انگریزی ویب سائٹ "timeanddate.com کے مطابق روم کے شہنشاہ نیرو نے 9 جون 68ء کو 31 سال کی عمر میں خودکُشی کی ۔ واضح رہے کہ اس سے پہلے سینٹ نے نیرو کو موت کی سزا سنائی تھی۔
مذکورہ ویب سائٹ کے مطابق 15 دسمبر 37ء کو روم میں پیدا ہوئے۔
وکی پیڈیا کے مطابق نیرو (Nero) سلطنتِ روم کا شہنشاہ تھا جو پانچواں اور آخری سیزر ثابت ہوا۔ وہ حادثاتی طور پر تخت نشیں ہوا۔ وہ شہنشاہ ’’کلاڈیوس‘‘ کا بھتیجا تھا اسی نے بھتیجے کو جانشین مقرر کیا۔ وہ 54ء تا 68ء روم کے سیاہ و سفید کا مالک رہا۔
مؤرخ فیصلہ نہیں کر پائے کہ اس کے سیاہ کارنامے زیادہ ہیں یا سفید؟ نیرو ظلم سفاکی اور بے حسی میں شہرت رکھتا تھا۔ اس نے اپنی ماں، دو بیویوں اور اپنے محسن ’’کلاڈیس‘‘ کے بیٹے کو قتل کرایا۔ 19 جولائی 64ء میں روم آگ کی لپیٹ میں آیا تھا۔ خوفناک آگ 5دن تک بھڑکتی رہی، 14 اضلاع میں سے 4 جل کر خاکستر اور 7 بری طرح متاثر ہوئے ۔
ایک روایت کے مطابق جب آگ روم کے در و دیوار کو بھسم کر رہی تھی، اس وقت نیرو ایک پہاڑی پر بیٹھا بانسری بجا کر اس نظارے سے لطف اندوز ہو رہا تھا۔ یہ بھی کہا جاتا ہے کہ آگ اس کے حکم سے ہی لگائی گئی تھی۔ تاہم مؤرخ ’’ٹیسی ٹس‘‘ کے مطابق اس واقعہ کے وقت اس کی عمر 9 سال تھی۔ جب روم شعلوں کی لپیٹ میں تھا۔نیرو روم میں نہیں بلکہ وہاں سے 3 9میل دور ’’اینٹیم‘‘ میں تھا۔ اس نے واپسی پر ذاتی خزانے سے متاثرین کی بحالی کی کارروائیاں شروع کیں اور اپنا محل بے گھر ہونے والوں کے لیے کھول دیا۔ اس نے روم کو نئے سرے سے بسایا۔ خوبصورت عمارتیں اور کشادہ سڑکیں تعمیر کرائیں۔ آگ لگانے کے الزام میں اس نے بے شمار عیسائیوں کو قتل کرا دیا۔ 68ء میں فوج نے بغاوت کر دی، تو نیرو ملک سے بھاگ نکلا۔




تبصرہ کیجئے