214 total views, 1 views today

وکی پیڈیا کے مطابق ممتاز ترقی پسند شاعر اور نقاد ظہیر کاشمیری 12 دسمبر 1994ء کو لاہور میں انتقال کرگئے۔
21 اگست 1919ء کو امرتسر، برطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے۔ برِ صغیر پاک و ہند کے ممتاز گلوکاروں نے ظہیر کی شاعری پر اپنی آواز کا جادو جگایا ہے۔
عملی زندگی کا آغاز صحافت کے شعبہ سے کیا۔ رسالہ ’’سویرا‘‘ کے ایڈیٹر رہے۔ کالم نگار کی حیثیت سے روزنامہ ’’احسان‘‘، ’’نوائے وقت‘‘ اور ’’پکار‘‘ میں کالم لکھتے رہے۔ بعد ازاں روزنامہ ’’مساوات‘‘ اور ’’حالات‘‘ سے بھی وابستہ رہے۔
قیامِ پاکستان سے قبل لاہور آگئے اور فلمی دنیا سے وابستہ ہوگئے۔ کہانیاں لکھیں اور کچھ فلموں کی ہدایت کاری بھی کی۔
ذیل میں دیا جانے والا ضرب المثل شعر ظہیر کاشمیری ہی کا تخلیق کردہ ہے:
سیرت نہ ہو، تو عارض و رخسار سب غلط
خوشبو اُڑی تو پھول فقط رنگ رہ گیا




تبصرہ کیجئے