36 total views, 1 views today

معلوماتِ عامہ کی انگریزی ویب سائٹ “britannica.com” کی تحقیق کے مطابق 22 اکتوبر 2010ء کو وکی لیکس (WikiLeaks) نامی مشہور ویب سائٹ نے امریکہ کی عرق کے خلاف ہونے والی جنگ کی ہزاروں دستاویزات شیئر کیں، جس کی وجہ سے پوری دنیا میں تہلکہ مچ گیا۔
بی بی سی اردو سروس کی 23 اکتوبر 2010ء کو شائع ہونے والی ایک سٹوری کے مطابق ’’عراق پر جاری ہونے والی 4 لاکھ خفیہ دستاویزات اور اِسی سال جولائی میں افغانستان پر 70 ہزار خفیہ دستاویزات شائع کرنے کے بعد اس نے صحافتی اور حکومتی حلقوں میں ہلچل مچا دی ہے۔‘‘
جرمنی کے نشریاتی ادارے ڈویچے ویلے (DW) کے مطابق ’’وکی لیکس خفیہ راز افشا کرنے والی ایک ویب سائٹ ہے۔ اس ویب سائٹ کے بانی جولیان اسانج ہیں۔ امریکی فوجی کارروائیوں سے متعلق راز افشا کرنے پر اس نے عالمگیر شہرت حاصل کی۔‘‘




تبصرہ کیجئے