496 total views, 1 views today

وکی پیڈیا کے مطابق معروف پاکستانی اداکار محمد علی 19 مارچ 2006ء کو 76 سال کی عمر میں وفات پاگئے۔
آپ کو اپنی بے مثال اداکاری پر ’’شہنشاہِ جذبات‘‘ کے لقب سے بھی یاد کیا جاتا ہے۔ پاکستان فلم انڈسٹری کے سنہرے دور کی جب بھی تاریخ لکھی جائے گی، تو شہنشاہِ جذبات محمد علی کا نام سنہرے حروف میں لکھا جائے گا۔ محمد علی ایک بہت بڑے فنکار اور عظیم انسان تھے ۔ انہوں نے اداکاری میں اَنمٹ نقوش چھوڑے ہیں۔
آپ نے 277 فلموں میں کام کیا جن میں 248 اردو، 17 پنجابی، 8 پشتو، 2 ڈبل وریژن انڈین، 1بنگالی، 28فلموں میں بطورِ مہمان اداکار اور ایک ڈاکو منٹری فلم میں کام کیا۔
مسلم سربراہی کانفرنس 1974ء کے دوران ہی مسقط عمان کے سلطان قابوس نے انھیں غیر سرکاری سفیر کی حیثیت سے تعریفی شیلڈ پیش کی اور ایران کے شہنشاہ نے پہلوی ایوارڈ دیا۔
محمد علی جتنے اچھے اداکار تھے، اس سے کئی زیادہ اچھے انسان بھی تھے، آپ نے ’’علی زیب فاؤنڈیشن‘‘ کے تحت سر گودھا، فیصل آباد، ساہیوال اور میانوالی میں تھیلی سیمیا میں مبتلا بچوں کے علاج اور کفالت کے لیے ہسپتال قائم کیے، جہاں بلا معاوضہ بچوں کا علاج کیا جاتا ہے۔ اس ادارے کے تمام اخراجات محمد علی اپنے وسائل سے پورے کرتے تھے۔ ’’علی زیب فاؤنڈیشن‘‘ کے علاوہ آپ کئی دیگر اداروں کے صدر اور فاؤنڈر ممبر رہے۔




تبصرہ کیجئے