29 total views, 2 views today

’’صفر‘‘ قمری تقویم کا دوسرا مہینا اور اسلامی مہینوں کی لڑی کا دوسرا موتی ہے۔ اسلام کی آمد سے قبل بھی اس مہینے کا نام صفر ہی تھا۔ اسلام نے اس کے نام کو برقرار رکھا۔
’’صفر‘‘ کے بارے میں غلط باتوں اور توہمات کو ختم کرنے کے لیے اسے ’’ صفر المظفر‘‘ کہا جاتا ہے۔ قبل از اسلام اہلِ جاہلیت، ماہِ صفر کو منحوس خیال کرتے اور اس میں سفر کرنے کو برا سمجھتے تھے۔ اسی طرح دورِ جاہلیت میں ماہِ محرم میں جنگ و قتال کو حرام خیال کیا جاتا اور یہ حرمتِ قتال، ماہِ صفر تک برقرار رہتی لیکن جب صفر کا مہینا شروع ہو جاتا اسے منحوس سمجھا جاتا۔ ماہِ صفر میں جب جنگ و جدال دوبارہ شروع ہو جاتے، اہلِ عرب جنگ کے لیے چلے جاتے اور گھرو ں کو خالی چھوڑ جاتے۔ اس لیے اس مہینے کا نام صفر (جس کے معنی خالی کے ہیں) رکھا گیا تھا۔ الغرض، آج کے باشعور معاشرے میں بھی بہت سے لوگ ماہِ صفر کے بارے جہالت اور دین سے دوری کے سبب ایسی توہمات کا شکار ہیں جن کا دینِ اسلام سے دور کا بھی تعلق واسطہ نہیں۔
جیسا کہ اس مہینے میں توہم پرست لوگ شادی کرنے کو نحوست کا باعث قرار دیتے ہیں۔ اس میں کسی کام مثلاً کاروبار وغیرہ کی ابتدا نہیں کرتے۔ لڑکیوں کو رخصت نہیں کرتے۔ اس قسم کے اور بھی کئی کام ہیں جنہیں کرنے سے پرہیز کرتے ہیں۔ ان لوگوں کا اعتقاد ہوتا ہے کہ ہر وہ کام جو اس مہینے میں شروع کیا جاتا ہے، وہ منحوس یعنی خیر و برکت سے خالی ہوتا ہے۔
بلاشبہ ماہ و سال، شب و روز اور وقت کا ایک ایک لمحے کا خالق اللہ ربّ العزت ہے اور اللہ تعالا نے کسی دن، مہینے یا گھڑی کو منحوس قرار نہیں دیا۔ در حقیقت ایسے توہمانہ خیالات غیر مسلم اقوام اور قبل از اسلام مشرکین کے ذریعے معاشرے میں داخل ہوئے اور آج یہی فاسد خیالات مسلم اقوام میں بھی در آئے ہیں، جبکہ دینِ اسلام کے روشن صفحات ایسی توہمات سے پاک ہیں۔
کسی وقت کو منحوس سمجھنے کی اسلام میں کوئی گنجائش نہیں بلکہ کسی دن یا کسی مہینا کو منحوس کہنا درحقیقت اللہ ربّ العزت کے بنائے ہوئے زمانہ میں، جو شب وروز پر مشتمل ہے، نقص اور عیب لگانے کے مترادف ہے۔ ارشادِ باری تعالا ہے کہ ’’ آدم کا بیٹا مجھے تکلیف دیتا ہے۔ وہ وقت (دن، مہینے، سال) کو برا کہتا ہے۔ حالاں کہ وقت (زمانہ) مَیں ہوں، بادشاہت میرے ہاتھ میں ہے، مَیں ہی دن اور رات کو بدلتا ہوں۔‘‘
سو اس سے معلوم یہ ہوا کہ دن رات اللہ تعالا کے پیدا کردہ ہیں۔ کسی کو عیب دار ٹھہرانا خالق و مالک کی کاریگری میں عیب نکالنا ہے۔ ایک حدیث میں رسولؐ اللہ نے توکل کے بارے فرمایا: ’’جان لو! اگر لوگ اس بات پر جمع ہوجائیں کہ وہ تمہیں کچھ فائدہ پہنچائیں، تو وہ کچھ فائدہ نہیں پہنچا سکتے، مگر وہی جو اللہ نے تمہاری تقدیر میں لکھ دیا ہے۔ اور اگر لوگ اس بات پر جمع ہو جائیں کہ وہ تمہیں کچھ نقصان پہنچائیں، تو وہ تمہیں کچھ نقصان نہیں پہنچا سکتے مگر وہی جو اللہ نے تم پر لکھ دیا ہے۔‘‘
سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسولؐ اللہ نے فرمایا: ’’بدشگونی لینا شرک ہے، بدشگونی لینا شرک ہے، بدشگونی لینا شرک ہے۔‘‘ (مشکوٰۃ )
ایک دوسری حدیث میں رسولِ اکرمؐ نے ارشاد فرمایا: ’’جو شخص بدشگونی کے ڈر کی وجہ سے اپنے کسی کام سے رُک گیا یقینا اس نے شرک (اصغر) کا ارتکاب کیا۔‘‘
اس سے معلوم ہوا کہ بدشگونی یعنی کسی چیز کو منحوس خیال کرنا شریعت میں سختی سے ممنوع ہے۔ لہٰذا ماہِ صفر کو منحوس خیال کر تے ہوئے اس مہینے میں شادیاں کرنے سے رُکنا احادیث کے مطابق شرکیہ عمل ہے جس سے ہر صورت میں اجتناب ضروری ہے۔
بعض خواتین و حضرات صفر المظفر کے آخری بدھ کو عید کی طرح خوشیاں مناتے ہیں جس کی وجہ یہ بیان کی جاتی ہے کہ جناب نبی اکرمؐ آخری بدھ میں صحت یاب ہوئے تھے اور سیر و تفریح کے لیے باہر تشریف لے گئے تھے۔ حالاں کہ اس دعوا کی اصل نہ حدیث میں ہے اور نہ تاریخ کی کتابوں ہی میں موجود ہے۔ برصغیر میں ماہِ صفر کو تیرہ تیزی کا مہینا بھی کہا جاتا ہے۔ ایسا کہنے والوں کو گمان یا خیال ہے کہ اس ماہ کے پہلے 13 دن بہت منحوس ہوتے ہیں۔ ان دنوں میں جادو گر، جنات اور بد روحیں کھلے عام آفات مچاتی ہیں اور کام بگاڑتی ہیں۔
ایک کہاوت یہ بھی بنائی گئی ہے کہ ان دنوں میں کوئی بیماری ہو جائے، تو وہ مریض مشکل سے بچتا ہے یا اس ماہ میں لگنے والی بیماری مہلک یا شدید ثابت ہوتی ہے۔ جب کہ یہ سب باتیں عوام میں پھیلادی گئی ہیں، جو کہ محض توہمات اور گھڑی ہوئی باتیں ہیں۔ لغویات اور بدعات ہیں اور دینِ حنیف میں اضافہ ہیں۔ شریعت میں ان کا کوئی جواز نہیں۔ اسلام ایک مکمل ضابطۂ حیات ہے جو ضلالت و جہالت سے مبرا اور دلائل و براہین سے آراستہ ہے۔ اسلام کے تمام احکام پایۂ تکمیل کو پہنچ چکے ہیں۔ اور اس دینِ مبین میں خرافات و بدعات کے لیے کوئی جگہ نہیں۔ اب کوئی نام نہاد عالمِ دین، مفتی یا محدث ایسا نہیں جو اس دینِ مبین اور صاف و شفاف چشمے میں بدعات و خرافات کا زہر ملائے لیکن افسوس ہے کہ شیطان اور اس کے پیروکاروں نے اس دین صافی کو ضلالت و جہالت سے خلط ملط کرنے اور خرافات سے داغ دار کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی۔ دینِ اسلام نے انسان کی ہر سطح پر کامل رہنمائی کی ہے۔ اللہ تعالا کی ذات پر ایمان، اعتقاد اور توکل کا تقاضا یہ ہے کہ سب کچھ اسی سے ہونے کا یقین انسان کے قلب و ذہن میں راسخ ہو۔ کسی شے کے بارے میں بدفالی، نحوست اور توہم پرستی کا نظریہ درحقیقت ایک غیراسلامی سوچ اوراسلامی تعلیمات کے سراسر منافی عمل ہے۔ ہمیں یاد رکھنا چاہیے کہ ہم اپنے خالق و مالک اﷲ کریم کو اس صورت میں راضی کر سکتے ہیں کہ جب ہم اس کے ارشادات اور تعلیمات کی پابندی و پیروی کریں اور شریعت و سنت کے مقابلے میں اپنی نفسانی خواہشات اور توہمات کو کبھی ترجیح نہ دیں۔
………………………………………….
لفظونہ انتظامیہ کا لکھاری یا نیچے ہونے والی گفتگو سے متفق ہونا ضروری نہیں۔ اگر آپ بھی اپنی تحریر شائع کروانا چاہتے ہیں، تو اسے اپنی پاسپورٹ سائز تصویر، مکمل نام، فون نمبر، فیس بُک آئی ڈی اور اپنے مختصر تعارف کے ساتھ editorlafzuna@gmail.com یا amjadalisahaab@gmail.com پر اِی میل کر دیجیے۔ تحریر شائع کرنے کا فیصلہ ایڈیٹوریل بورڈ کرے گا۔






تبصرہ کیجئے