900 total views, 1 views today

اردو کی عظمت کا اندازہ اس سے کیجیے کہ ہر جانور کی صوت کے لیے علیحدہ لفظ ہے: مثلاً
شیر ………… دھاڑتا ہے
ہاتھی ………… چنگھاڑتا ہے
گھوڑا ………… ہنہناتا ہے
گدھا ………… ہیچوں ہیچوں کرتا ہے
کتا …………بھونکتا ہے
بلّی ………… میاؤں کرتی ہے
گائے ………… رانبھتی ہے
سانڈ ………… ڈکارتا ہے
بکری ………… ممیاتی ہے
کوئل ………… کوکتی ہے
چڑیا ………… چوں چوں کرتی ہے
کوا ………… کائیں کائیں کرتا ہے
کبوتر ………… غٹر غوں کرتا ہے
مکھی ………… بھنبھناتی ہے
مرغی ………… کڑکڑاتی ہے
اُلّو ………… ہوکتا ہے
مور ………… چنگھاڑتا ہے
طوطا ………… رٹ لگاتا ہے
مرغا ………… ککڑوں کوں کرتا ہے
پرندے ………… چرچراتے ہیں
اونٹ ………… بغبغاتا ہے
سانپ ………… پھنکارتا ہے
گلہری ………… چٹ چٹاتی ہے
مینڈک ………… ٹرّاتا ہے
جھینگر ………… جھنگارتا ہے
بندر ………… گھگھیاتا ہے

(کتاب ’’فنِ خطابت‘‘ از شورش کاشمیری، صفحہ نمبر 106 اور 107، ناشر مطبوعات چٹان)




تبصرہ کیجئے