567 total views, 1 views today

ایک دن جارج برنارڈ شا نے کسی اور مِزاح نگار کو تجویز پیش کی: ’’آؤ ہم دونوں مل کر ایک کتاب لکھیں، تاکہ مِزاح دو آتشہ ہوجائے۔‘‘
اس ادیب نے جواب دیا: ’’مسٹر شا، کہیں گدھے اور گوڑھے کو بھی ایک ساتھ جوڑا جاسکتا ہے؟‘‘
شا نے فوراً جواب دیا، ’’بھئی، اگر یہ تجویز پسند نہ آئی، تو نہ سہی، لیکن مجھے خواہ مخواہ انسان سے گھوڑا بنا رہے ہو۔‘‘
(ڈاکٹر علی محمد خان کی کتاب کِشتِ زعفران مطبوعہ الفیصل پہلی اشاعت فروری 2009ء، صفحہ نمبر 170 سے انتخاب)