487 total views, 2 views today

اکبر کے کہنے پر بیربل نے ایک تصویر چھے دنوں میں بنا کر اُسے پیش کی۔ اکبر نے اپنے دوسرے آٹھ درباریوں سے کہا کہ وہ تصویر پر رائے دیں۔ ان میں سے ہر ایک نے ایک ایک جگہ پر نقطہ ڈالا اور کہا کہ تصویر یہاں سے ٹھیک نہیں۔ بیربل نے ان سے کہا کہ وہ سب ایسی ہی تصویر بنا کر دیں۔ جس میں کوئی غلطی نہ ہو، مگر کوئی شخص آگے نہ بڑھا۔ اکبر نے ڈوبی ہوئی نظروں سے انہیں دیکھا اور کہا ’’نکتہ چیں۔‘‘ (احمد فرہاد کی ترجمہ و تالیف شدہ کتاب ’’کامیابی‘‘ مطبوعہ ’’رُمیل ہاؤس آف پبلی کیشنز‘‘ پہلی جلد، صفحہ نمبر 108 سے انتخاب)




تبصرہ کیجئے