317 total views, 1 views today

تنگ دستی اگر نہ ہو غالبؔ
تن درستی ہزار نعمت ہے
مانتے ہیں یہ شعر غالبؔ کا نہیں ہے؟
جی ہاں، یہ شعر ایک غیر معروف شاعر ’’قربان علی بیگ سالکؔ‘‘ کا ہے، جسے یوں پڑھا جانا چاہیے:
تنگ دستی اگر نہ ہو سالکؔ
تن درستی ہزار نعمت ہے
اس شعر کے حوالہ سے محمد شمس الحق اپنی تالیف ’’اردو کے ضرب المثل اشعار (تحقیق کی روشنی میں)‘‘  کے صفحہ نمبر 200 پر دعوا کرتے ہیں کہ محولہ بالا شعر سالکؔ کا ہے، دلیل کے طور پر رقم کرتے ہیں کہ یہ ’’کلیاتِ قربان علی سالک‘‘ مرتبۂ کلب علی خان فائقؔ، مجلسِ ترقیِ ادب، لاہور، نومبر 1966ء، صفحہ نمبر 474 پر موجود ہے۔




تبصرہ کیجئے