84 total views, 1 views today

راہِ دُورِ عشق میں روتا ہے کیا
آگے آگے دیکھیے ہوتا ہے کیا
(میر تقی میرؔ)
’’کلّیاتِ میر‘‘ مرتبۂ ظلِ عباس عباسی، صفحہ 133۔
جب کہ مصرعِ اولیٰ اس طرح مشہور ہے:
ابتدائے عشق ہے روتا ہے کیا
(’’اردو کے ضرب المثل اشعار تحقیق کی روشنی میں‘‘ از (تحقیق و تالیف) محمد شمس الحق، مطبوعہ ’’فکشن ہاؤس‘‘، اشاعت چہارم 2020ء، صفحہ نمبر 157 سے انتخاب )




تبصرہ کیجئے