388 total views, 1 views today

لکھنوی شاعری کی ان خصوصیات میں جن کے باعث دبستانِ لکھنؤ بدنام ہے نسائیت کو بھی ایک مقام حاصل ہے۔ عورتوں کے مخصوص محاورات و مصطلحات اور نسوانی جذبات و احساسات کو شعر میں شامل کرنا اصطلاح میں نسائیت کہلاتا ہے۔ ریختی میں نسائیت کا عنصر بنیادی اہمیت رکھتا ہے۔
ڈاکٹر ابواللیث صدیقی لکھتے ہیں: ’’نسائیت اور فحش گوئی سے مل کر ریختی کی بنیاد پڑی۔‘‘
(ابوالاعجاز حفیظ صدیقی کی تالیف ادبی اصطلاحات کا تعارف مطبوعہ اسلوب لاہور، اشاعتِ اول، مئی 2015ء، صفحہ 488 سے انتخاب)




تبصرہ کیجئے