1,239 total views, 1 views today

’’مہمند‘‘ غوریہ خیل پٹھانوں کی ایک شاخ ہیں۔ وہ زیریں یا میدانی مہمند اور بالائی یا بَرمہمند میں منقسم ہیں۔ میدانی مہمند ضلع پشاور کے جنوب مغرب اور دریاربارا کے جنوب میں ہیں۔ ان کی پانچ شاخیں ہیں: میارزئی، موسیٰ زئی، داویزئی، متنی اور سرگانی۔
سارے غوریہ خیل کی طرح ان کے سردار بھی ارباب کہلاتے ہیں، جس کا مطلب ’’آقا‘‘ ہے۔ یہ نام مغل شہنشاہوں کا عطا کردہ ہے۔ وہ عمدہ اور محنتی کاشتکار ہیں اور ماسوائے آفریدی بارڈر کے باقی تمام مقامات پر امن سے رہتے ہیں۔
برمہمند سولہویں صدی کی ابتدا میں غوریہ خیل سے الگ ہوئے اور دکّا کے مقام سے دریائے کابل پار کرکے اس دریا کے شمالی پہاڑی علاقے پر قابض ہوگئے، اور وہاں کے باشندوں کو اوپر کافرستان کی طرف نکال دیا۔ پھر انہوں نے دریائے کابل دوبارہ پار کیا اور دریا کے جنوبی کنارے اور آفریدی پہاڑیوں کے مغرب سے لے کر درۂ خیبر کے شمال تک کے علاقے کے مالک بن گئے۔
(“ذاتوں کا انسائیکلو پیڈیا” از ای ڈی میکلیگن/ ایچ اے روز، مترجم یاسر جواد، شائع شدہ بُک ہوم لاہور، صفحہ نمبر 419 سے ماخوذ)




تبصرہ کیجئے