53 total views, 1 views today

اقوامِ متحدہ کے زیر اہتمام ہر سال 10 دسمبر کا دن انسانی حقوق کے عالمی دن کے طور پر منایا جاتا ہے۔
ہم برس ہا برس سے ’’انسانی حقوق کا عالمی‘‘ دن منارہے ہیں…… لیکن اس کے باوجود نامعلوم کیا مجبوریاں ہیں کہ مقبوضہ کشمیر سے انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزیوں، اور ترقی یافتہ ممالک سے آزادی کے نام پر خواتین کی عصمت کی پامالی کا سلسلہ نہ رُک سکا۔
آج بھی ترقی یافتہ اور انسانی حقوق کے تحفظ کے سب سے بڑے علم بردار ملک امریکہ میں انسانی حقوق کے معاملے میں پستی کا یہ عالم ہے کہ کالوں کے بچوں کے علاحدہ سکول، علاحدہ بسیں، ہسپتال، ہوٹل، کلب اور آبادیاں تک علاحدہ ہیں۔
امریکہ ہی کیا مغربی یورپ کے کسی بھی ملک میں کالی رنگت والوں کے ساتھ امتیازی سلوک روا رکھا جاتا ہے۔
پڑوسی ملک بھارت جو کہ ’’دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت‘‘ کے ساتھ ’’سیکولر‘‘ ہونے کا بھی دعویدار ہے، وہاں ذات پات کے نام پر انسانوں پر ظلم و جبر صدیوں سے جاری ہے۔ جو اعلا ذات کے گھرانے میں پیدا ہوگیا، وہ چھوٹی ذات والوں پر ہر طرح ظلم روا رکھ سکتا ہے۔
ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم غور کریں کہ کیااس سال بھی ’’انسانی حقوق کے عالمی دن‘‘ پر محض تقاریر ہوں گی…… پُرجوش نعرے لگیں گے…… اجتماعات منعقد ہوں گے…… ریلیاں نکالی جائیں گی…… دورِجاہلیت کا موازنہ و مقابلہ دور جدیدکے ساتھ کیا جائے گا…… لیکن کیا ہو گا پھر بھی وہی کچھ جو کچھ پہلے ہوتا رہا ہے؟ سال کے 365 دنوں میں سے محض ایک دن انسانی حقوق کے لیے مناکر باقی 364 دن انسانی حقوق کی پامالی……!
دوسری عالمی جنگ کی بدترین تباہ کاریوں اور اس میں بڑے پیمانے پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے پیشِ نظر ’’لیگ آف نیشن‘‘ کو ختم کرکے اقوامِ متحدہ کا قیام عمل میں آیا۔اقوامِ متحدہ کی انسانی حقوق کے چارٹر اور قرارداد کی رو سے دنیا بھر کے انسانوں کو ہر طرح کے حقوق جن میں جینے کا حق، امتیازسے پاک مساوات یا برابری کا حق، اظہارِ رائے کی آزادی، معاشی، سماجی اور ثقافتی حقوق جن میں روزگار، سماجی تحفظ، تعلیم، صحت، ترقی اور حقِ خود ارادیت اور دیگر حقوق شامل ہیں۔
اقوامِ متحدہ کے رکن ممالک اور انسانی حقوق کے چارٹر پر دستخط کرنے والے ممالک پر یہ لازم ہے کہ وہ اپنے شہریوں کو یہ تمام حقوق نہ صرف فراہم کریں بلکہ انہیں مقدم جانیں…… لیکن اس کے باوجود آج دنیا کے بیش تر ممالک میں کہیں رنگ و نسل کے نام پر ، کہیں ذات پات کے نام پر، تو کہیں مذہب کے نام پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور انسانی حقوق کی پامالی کا سلسلہ جاری ہے…… جب کہ اپنے قانون پر عمل درآمد کروانے میں اقوامِ متحدہ کا کردار انتہائی کمزور ہے…… جب کہ 17ویں صدی سے پہلے اہلِ مغرب میں حقوقِ انسانی اور حقوقِ شہریت کا کوئی تصور موجود نہ تھا۔
17ویں صدی کے بعد بھی ایک مدت تک فلسفیوں اور قانونی افکار پیش کرنے والے لوگوں نے تو ضرور اس خیال کو پیش کیا تھا…… لیکن عملاً اس تصور کا ثبوت 18ہویں صدی کے آخر میں امریکہ اور فرانس کے دستوروں اور اعلانات ہی میں ملتا ہے…… جب کہ بادشاہوں اور قانون ساز اداروں کے دیے ہوئے حقوق جس طرح دیے جاتے ہیں۔ اسی طرح جب وہ چاہیں واپس بھی لیے جا سکتے ہیں…… لیکن اسلام میں یہ حقوق اللہ تعالا کی طرف سے دیے گئے ہیں۔ انسانی حقو ق کے بارے میں اسلام کا تصور بنیادی طور پر بنی نوع انسان کے احترام اور باہمی مساوات پر مبنی ہے۔
اللہ ربّ العزت نے نوعِ انسانی کو دیگر تمام مخلوق پر فضیلت و تکریم عطا کی ہے۔ اسلام نے تمام نوعِ انسانی میں رنگ و نسل، زبان اور قومیت کی بنا پر سارے امتیازات کی جڑ کاٹ دی۔ اسلام کے نزدیک یہ حق انسان کو انسان ہونے کی حیثیت سے حاصل ہے کہ اس کے ساتھ اس کے رنگ یا اس کی پیدائش کی جگہ یا اس کو جنم دینے والی نسل و قوم کی بنا پر کوئی امتیاز نہ برتا جائے۔ اسے دوسروں کی بہ نسبت حقیر نہ ٹھہرایا جائے…… اور اس کے حقوق دوسروں سے کمتر نہ رکھے جائیں۔ دنیا کی کوئی مجلس قانون ساز ادارہ اور دنیا کی کوئی حکومت ان احکاماتِ الٰہی کے اندر رد و بدل کرنے کی مجاز نہیں۔ ان کو واپس لینے یا منسوخ کر دینے کا حق کسی کو حاصل نہیں۔
دینِ حق ’’اسلام‘‘ انسان کو اس بات کا پابندبناتا ہے کہ کسی کا ناحق قتل نہ کیا جائے…… بے حیائی نہ پھیلائی جائے…… کسی کی دل آزاری نہ کی جائے…… کسی کا مذاق نہ اُڑایا جائے…… کسی کی عزت و آبرو سے نہ کھیلا جائے…… اور ملک و ریاست کو خطرے میں نہ ڈالا جائے…… اور اس کے خلاف سازش نہ کی جائے۔
فلاحِ انسانی پر مبنی ان شرائط کے ساتھ تمام انسانوں کو اظہارِ رائے کی مکمل آزادی ہے۔
……………………………….
لفظونہ انتظامیہ کا لکھاری یا نیچے ہونے والی گفتگو سے متفق ہونا ضروری نہیں۔ اگر آپ بھی اپنی تحریر شائع کروانا چاہتے ہیں، تو اسے اپنی پاسپورٹ سائز تصویر، مکمل نام، فون نمبر، فیس بُک آئی ڈی اور اپنے مختصر تعارف کے ساتھ editorlafzuna@gmail.com یا amjadalisahaab@gmail.com پر اِی میل کر دیجیے۔ تحریر شائع کرنے کا فیصلہ ایڈیٹوریل بورڈ کرے گا۔