47 total views, 1 views today

گذشتہ دہائی میں مشرقِ وسطیٰ میں قطر ایک منفرد ملک کے طور پر ابھرا۔ چھوٹے سے اس جزیرے کی شناخت اب دنیا میں امن، استحکام، تعلیم کے فروغ، بحث ومباحثے اور ثالثی کے ذریعے تنازعات کے حل میں مددگار ریاست کی ہے۔ تنازعات میں الجھنے کے بجائے جو تنازعات کے حل کے لیے مالی معاونت اور انسانی وسائل کا بے دریغ استعمال کرتا ہے۔ دنیا کی معروف یونیورسٹیوں اور دانش گاہوں کے علاقائی کیمپس دارالحکومت دوحہ میں قائم ہیں۔جہاں مکالمے، تحقیق، مشترکہ انسانی مفاد اور اقدار کو فروغ دینے کی ترغیب دی جاتی ہے ۔
گذشتہ ہفتے قطر کے سفیر جناب شیخ سعود بن عبدالرحمان التھانی کے ساتھ اسلام آباد میں ایک دلچسپ نشست ہوئی۔ دبلے پتلے درمیانی عمر کے سفیر کے ساتھ ملاقات محض معلومات تک رسائی اور تجزیہ میں گہرائی پیدا کرنے کی ایک کوشش نہ تھی بلکہ یہ سمجھنے کی ایک شعوری کاوش بھی تھی کہ آخر قطر نے دیگر عرب ممالک سے ایک مختلف راہ کا انتخاب کیوں کیا؟ وہ کیا محرکات تھے جن کی بنیاد پر قطر نے مغرب اور عرب دنیا کے مابین غیر جانب دار ثالث اور پل کا کردار ادا کرنے کا انوکھا فیصلہ کیا؟ افغانستان میں طالبان اور امریکیوں کے مابین مذاکرات کی بساط بچھانے اور آخرِکار سیاسی سمجھوتا کراکر قطر نے دنیا بھر سے داد و تحسین حاصل کی۔ افغانستان میں ثالثی کا کردار ادا کرنے کے بعد قطر کی عالمی حیثیت اور مرتبے میں غیر معمولی اضافہ ہوا۔
قارئین، قطر کی ان غیر معمولی کامیابیوں کو سمجھنے کے لیے ضروری ہے کہ اس ملک کے نظام اور سیاسی فکر کا پہلے ادارک کیا جائے۔اس حوالے سے ایک سوال کے جواب میں جناب سعود التھانی نے بتایا کہ ثالثی اور تنازعات کے حل میں قطر کی دلچسپی اور کردار محض کسی وقتی ضرورت یا سیاسی مصلحت کے تابع نہیں بلکہ ریاستی پالیسی کا حصہ اور آئینی ذمہ داری ہے۔ قطر کی حکومت اور عوام مذاکرات اور ثالثی کے ذریعے تنازعات کے حل کو اپنااخلاقی، ثقافتی اور مذہبی فریضہ تصورکرتے ہیں۔ غالباً قطر دنیا کا وہ واحد ملک ہے جس نے اپنے آئین میں ملک کی خارجہ پالیسی کا تعین کرتے ہوئے دو ٹوک انداز میں لکھا کہ قطر کی خارجہ پالیسی بین الاقوامی تنازعات کے پُرامن حل کی حوصلہ افزائی کے ذریعہ بین الاقوامی امن و سلامتی کو مستحکم کرنے کے اصول پر مبنی ہے۔
سعود التھانی نے بتایا کہ قرآنِ مجید تنازعات کے حل کے لیے ثالثی اور مفاہمت جیسے ٹولز کے استعمال کی ترغیب دیتاہے۔ اسی جذبے کے تحت قطر نے حالیہ برسوں میں یمن، اریٹیریا، سوڈان اور لبنان جیسے تنازعات میں ثالثی کا کردار ادا کیا۔ قطر نے ثالثی کو بطور ایک ادارے کے ترقی دی۔ رفتہ رفتہ اب قطرکے پاس ایسے قابلِ اعتماد ماہرین کی ایک معقول تعداد دستیاب ہوگئی ہے جو سرکاری، غیر سرکاری اور سول سوسائٹی کی مدد سے دنیا بھر میں قابلِ اعتماد ثالث کا کردار ادا کرنے کے قابل ہیں۔ چناں چہ دنیا قطر کو سویڈن اور ناروے کے پائے کا قابلِ اعتماد ثالث تسلیم کرتی ہے۔
قطر کی غیر سرکاری تنظیموں نے بھی دنیا بھر میں سماجی خدمات سرانجام دے کر نمایاں شناخت حاصل کی۔ تنازعات اور خانہ جنگی کے شکار ممالک بالخصوص غزہ میں مقید فلسطینیوں کی مدد کی اطلاعات اکثر میڈیا کی زینت بنتی ہیں لیکن پاکستان جیسے دوست ملک میں قطر نے سماجی اور تعلیم کے شعبے میں خاموشی کے ساتھ گراں قدر خدمات سرانجام دی ہیں۔ سعود التھانی نے بتایا کہ قطر پاکستان میں غریب اور وسائل سے محروم طبقات کے بچوں کے لیے یونیسکو، برٹش کونسل، یو این ایچ سی آر، سٹیزن فاؤنڈیشن اور ایلائٹ فاؤنڈیشن جیسے معتبر اداروں کی شراکت سے 16 لاکھ بچوں کو تعلیم دلانے کے لیے ’’ایجوکیٹ اے چائلڈ‘‘ کا پروگرام چلا رہا ہے۔ اس پروگرام کی بدولت لاکھوں بچے بنیادی تعلیم سے مستفید ہوئے۔ علاوہ ازیں زلزلہ ہو یا سیلاب، ’’قطر چیریٹی‘‘ دیگر عالمی اداروں کے ہمراہ مشکل کی اس گھڑی میں متاثرین کی مدد کے لیے صفِ اوّل میں نظر آتی ہے۔
سعود التھانی کہتے ہیں کہ وہ پاکستان سے محبت کرتے ہیں۔ انہیں اس ملک میں کوئی اجنبیت محسوس نہیں ہوتی۔ لوگ انہیں عزت واحترام کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ ان کی راہ میں پلکیں بچھاتے ہیں۔ حیرت اور استعجاب کے ساتھ سفیرِ محترم نے کہا کہ ایک نہیں کئی مرتبہ ان سے ہوٹلوں میں کھانے کا بِل نہیں لیاگیا۔ محبت اوراخوت کے اس لازوال رشتے کی مثال اور کئی نہیں ملتی۔ عزت ماب سفیر نے بتایا کہ قطر کی حکومت اور لوگ پاکستان کی ترقی اور خوشحالی کے لیے ہر ممکن تعاون کررہے ہیں۔ مضبوط اور ترقی یافتہ پاکستان پورے خطے کے مفاد میں ہے۔
فخر سے انہوں نے بتایا کہ 50 ہزار کے لگ بھگ پاکستانی شہری قطر میں مختلف شعبہ جات میں نمایاں کردار ادا کررہے ہیں۔ وہ محض لیبر مارکیٹ کا حصہ نہیں بلکہ تعلیم، صحت، کاروبار اور کھیلوں کے میدان میں بھی ممتاز حیثیت کے مالک ہیں۔ انہوں نے قطر میں کئی شعبوں کی بنیاد رکھی اور انہیں کامیاب بنانے بھی کردار ادا کیا۔انہوں نے آگاہ کیا کہ گذشتہ چند برسوں میں دونوں ممالک کے درمیان تجارتی تعلقات میں بھی زبردست اضافہ ہوا ہے۔ خاص کر قطر اب پاکستان میں بہت سارے شعبوں میں براہِ راست سرمایہ کاری کر رہاہے۔ وقت کے ساتھ اس سرمایہ کاری میں اضافہ بھی ہوگا۔




قطر کے سفیر کے ساتھ اسلام آباد میں ایک دلچسپ نشست کے بعد لی جانے والی تصویر۔

الجزیرہ ٹی وی چینل کی دھوم پوری دنیا میں مچی ہوئی ہے۔ اس کی رپورٹنگ، تجزیوں اورتحقیقی دستاویزی فلموں نے میڈیا کی صنعت میں جاری مسابقت میں زبردست اضافہ کیا۔ مسلم دنیا کے مسائل کو اجاگر کرنے میں خاص طور پر الجزیزہ انگریزی کا بڑا حصہ ہے۔ مَیں نے استفسار کیا کہ قطر کی حکومت نے الجزیرہ جیسے ادارے کو کیوں کر آزادی سے کام کرنے دیا جوکہ اب عرب اور مسلم دنیا کی ایک شناخت بن چکا ہے؟انہوں نے بتایا کہ قطر کی حکومت الجزیرہ کے معاملات میں مداخلت نہیں کرتی، بلکہ اس کی انتظامیہ آزادی کے ساتھ خدمات سرانجام دیتی ہے۔ قطر میں اب درجنوں مقامی اور عرب ممالک کے ٹی وی چینل دکھائے جاتے ہیں۔ ناظرین کے پاس انتخاب کا موقع ہے۔ ان کی مرضی پر منحصر ہے کہ وہ کیا دیکھنا چاہتے ہیں۔ قطر کی حکومت لوگوں پر اپنی رائے مسلط نہیں کرتی۔
وزیراعظم عمران خان کی لیڈرشپ میں پاکستان بھی اب بتدریج ایک ایسا ملک بننے کی راہ پرگامزن ہے جو خطے میں امن، استحکام، مکالمے اور اقتصادی ترقی کو ترجیح دیتاہے۔اپنی سرزمین پر کسی دوسرے کی جنگ لڑے گا اور نہ جنگوں کا حصہ بننے کے پختہ عزم کا بارہا اظہار کیا جاچکا ہے۔ اس حوالے سے دونوں مشترکہ طور پر ایک دوسرے کے تجربات سے سیکھ سکتے ہیں۔ خاص طور پر افغانستان میں دونوں ممالک کو مل کر کام کرنے کا جو تجربہ حاصل ہوا اس کی بنیاد پر وہ پورے خطے کو ایک دوسرے سے مربوط کرنے کا کارنامہ سرانجام دے سکتے ہیں۔
قارئین، قطری سفیر کے ساتھ نشست اور ان کے تجربات سے استفادہ ایک خوشگوار تجربہ تھا، کیوں کہ مسلم دنیا میں اس طرح کی سیاسی فکر کے حامل حکمرانوں اور سفارت کاروں کا قحط ہے۔
…………………………………………………………..
لفظونہ انتظامیہ کا لکھاری یا نیچے ہونے والی گفتگو سے متفق ہونا ضروری نہیں۔ اگر آپ بھی اپنی تحریر شائع کروانا چاہتے ہیں، تو اسے اپنی پاسپورٹ سائز تصویر، مکمل نام، فون نمبر، فیس بُک آئی ڈی اور اپنے مختصر تعارف کے ساتھ editorlafzuna@gmail.com یا amjadalisahaab@gmail.com پر اِی میل کر دیجیے۔ تحریر شائع کرنے کا فیصلہ ایڈیٹوریل بورڈ کرے گا۔




تبصرہ کیجئے