142 total views, 1 views today

دیگر ممالک کی طرح پاکستان میں بھی ایڈز سے آگاہی اور اس سے بچاؤ کا عالمی دن یکم دسمبر کو منایا جاتا ہے۔ اس مرض سے بچاؤ کے لیے ضروری ہے کہ اس مرض کے بارے میں آگاہی حاصل کی جائے۔ ایڈز کا مرض غیر ذمہ دارانہ جنسی روابط اور بے راہ روی کے سبب پھیلتا ہے۔ ماہرینِ صحت کے مطابق قدرت نے انسانی جسم کو مختلف بیماریوں سے بچانے کے لیے نہایت ہی مؤثر اور مضبوط دفاعی نظام سے نوازا ہے، جس کو مدافعتی نظام کہا جاتا ہے۔ اسی کے طفیل جسم میں انسانی قوتِ مدافعت کار گزار ہوتی ہے، اور اس مدافعتی نظام میں خرابی کے باعث انسان مختلف بیماریوں کا شکار ہوتا ہے۔
مہلک مرض ایچ آئی وی ایڈز کا وائرس ڈائریکٹ انسانی مدافعتی نظام کو تباہ کر کے رکھ دیتا ہے۔ اس خطرناک وائرس کے حملے کے بعد جو بھی بیماری انسانی جسم میں داخل ہوتی ہے، نہایت سنگین اور مہلک صورتِ حال اختیار کرلیتی ہے۔ ایڈز کا وائرس زیادہ تر خون اور جنسی رطوبتوں میں پایا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ یہ جسم کی دوسری رطوبتوں یعنی تھوک، آنسو، پیشاب اور پسینہ میں بھی موجودسکتا ہے، مگر تھوک، آنسو، پیشاب اور پسینا بیماری پھیلانے کا باعث نہیں بنتے، بلکہ یہ بیماری صرف خون اور جنسی رطوبتوں کے ذریعے ہی پھیلتی ہے۔ ایڈز وائرس کسی بھی متاثرہ شخص سے اس کے جنسی ساتھی میں داخل ہو سکتا ہے، یعنی مرد سے عورت، عورت سے مرد اور متاثرہ ماں سے پیدا ہونے والے بچے میں جا سکتا ہے۔
خون کے اجزا کے ذریعے ایڈز کی بیماری درج ذیل صورتوں میں پھیلتی ہے، جب ایڈز کے وائرس سے متاثرہ خون یا خون کے اجزا کو کسی دوسرے مریض میں منتقل کیا جائے۔ جب ایڈز کے وائرس سے متاثرہ سرنج اور سوئیاں دوبارہ استعمال کی جائیں۔ وائرس سے متاثرہ اوزار جلد میں چبھنے یا پیوست ہونے سے، مثلاً کان اور ناک چھیدنے والے اوزار، دانتوں کے علاج میں استعمال ہونے والے آلات، حجام کے آلات اور جراحی کے دوران میں استعمال ہونے والے آلات استعمال کیے جائیں۔ ایڈز کا وائرس متاثرہ ماں کے بچے میں حمل کے دوران، پیدائش کے وقت یا پیدائش کے بعد منتقل ہو سکتا ہے۔
ایڈر کی علامات ظاہر ہونے سے پہلے اس کا وائرس انسانی جسم میں کئی مہینوں یا برسوں تک رہ سکتا ہے۔ کسی شخص کے ایڈز کے جراثیم کی اینٹی باڈیز (Antibodies) اس سے متاثر ہونے کے چھے ہفتے یا اس سے زیادہ عرصہ میں بنتی ہیں۔ جسم میں ایڈز کے جراثیم کی موجودگی معلوم کرنے کے لیے خون میں اینٹی باڈیز کی موجودگی کو ٹیسٹ کیا جاتا ہے۔ بدقسمتی سے یہ اینٹی باڈیز کسی کو بھی یہ بیماری پیدا ہونے سے نہیں بچا سکتیں۔ جس کسی میں بھی ایڈز کا یہ وائرس داخل ہو جاتا ہے، وہ اس کو دوسرے میں منتقل کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ یہ صلاحیت بیماری کے شروع میں یا بیماری کے آخر میں بہت زیادہ ہو جاتی ہے۔
ایڈز کی ابتدائی علامات فوری طور پر ظاہر نہیں ہوتیں۔ اس سے متاثرہ مریض کی بڑی علامات میں چند یہ ہیں کہ مختصر عرصہ میں جسم کا وزن دس فیصد سے زیادہ کم ہو جاتا ہے، ایک مہینے سے زیادہ عرصہ تک اسہال رہ سکتا ہے، بخار ایک مہینے سے زیادہ عرصہ تک رہ سکتا ہے۔
زندگی اللہ تعالیٰ کی ایک انمول نعمت ہے۔ ہمیں اپنی زندگی سے پیار کرنا چاہیے۔ ایڈز جیسے مہلک مرض سے بچنے کے لیے ہمیشہ اپنے جیون ساتھی تک محدود رہنا چاہیے۔ خود کو ہمیشہ جنسی بے راہ روی سے بچانا چاہیے۔ اگر ٹیکا لگوانا ضروری ہو، تو ہمیشہ غیر استعمال شدہ نئی سرنج کے استعمال پر اصرار کرنا چاہیے۔ خون کا انتقال تب کروانا چاہیے جب اس کی اشد ضرورت ہو۔ اگر زندگی بچانے کے لیے خون کا انتقال ضروری ہو، تو اس بات کا یقین کرلینا چاہیے کہ انتقال کیا جانے والا خون ایڈز اور یرقان وغیرہ کے وائرسز سے مکمل طور پر پاک ہے۔ ناک کان چھدواتے ہوئے ہمیشہ گرم پانی سے دھلے اوزار استعمال کرنا چاہئیں جب کہ شیو کرواتے وقت ہمیشہ نیا بلیڈ استعمال کرنا چاہیے۔
عالمی قوانین کے مطابق ایک مریض کے لیے استعمال ہونے والی کٹ کو دوبارہ استعمال کرنے سے پہلے 119 تا 130 سینٹی گریڈ تک گرم پانی اور کیمیکل سے دھونا ضروری ہوتا ہے۔ اس لیے آلاتِ جراحی کے صاف ستھرا ہونے کی تسلی کرنا چاہیے۔
نیشنل ایڈز کنٹرول پروگرام کے مینیجر کے مطابق ایڈز سے متاثرہ افراد کے علاج میں سب سے بڑی رکاوٹ اس مرض سے جڑے معاشرتی رویے ہیں جنہیں تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔ آگاہی مہم اور علاج معالجے کے مراکز کے باوجود اب بھی معاشرے میں اس مرض سے متعلق پائے جانے والے منفی رجحانات کی وجہ سے ایڈز سے متاثرہ افراد اپنی بیماری کو چھپاتے ہیں۔ مرض کو پوشیدہ رکھنے والے ایسے افراد نہ صرف اپنے بلکہ دیگر لوگوں کے لیے بھی خطرے کا باعث ہیں۔ ماہرینِ صحت کے مطابق آج سے دو ڈھائی عشرے قبل تک ایڈز ایک لاعلاج مرض تھا، لیکن اب اتنی بہتری ضرور آئی ہے کہ اس کے جراثیم کو کنٹرول کرنے کے لیے ادویہ دستیاب ہیں۔ ایڈز سے متاثرہ مریض ادویہ کے مسلسل استعمال سے بلڈ پریشر اور شوگر کے مریض کی طرح ایک نارمل زندگی گزار سکتا ہے۔ اس کا سستااور مؤثر علاج یہی ہے کہ اس مرض سے ہر ممکن احتیاط برتی جائے اور جنسی بے راہ روی سے بچا جائے۔
…………………………………………………….
لفظونہ انتظامیہ کا لکھاری یا نیچے ہونے والی گفتگو سے متفق ہونا ضروری نہیں۔ اگر آپ بھی اپنی تحریر شائع کروانا چاہتے ہیں، تو اسے اپنی پاسپورٹ سائز تصویر، مکمل نام، فون نمبر، فیس بُک آئی ڈی اور اپنے مختصر تعارف کے ساتھ editorlafzuna@gmail.com یا amjadalisahaab@gmail.com پر اِی میل کر دیجیے۔ تحریر شائع کرنے کا فیصلہ ایڈیٹوریل بورڈ کرے گا۔






تبصرہ کیجئے