339 total views, 1 views today

وزارت عظمیٰ کا منصب سنبھالنے کے محض پہلے بارہ دنوں میں وزیراعظم عمران خان کا وزارت خارجہ اور پاکستان کی مسلح افواج کے جنرل ہیڈ کوارٹر کا تفصیلی دورہ اور طویل مشاورتی نشست کو ایک خوشگوار آغاز قراردیاجاسکتاہے۔ پاکستان کو جس طرح کے داخلی اور بیرونی چیلنجز کا سامنا ہے، ان سے نبرد آزما ہونے کے لیے تمام اداروں بلکہ اسٹیک ہولڈرز کا ایک صفحے پر جمع ہونا اور باہمی اشتراک سے حکمت عملی مرتب کرنا ناگزیز ہوچکاہے۔
ملک کو درپیش کوئی ایک چیلنج ہو، تو حکومت تنہا مقابلہ کرے۔ معاشی طور پر ملک دیوالیہ ہوچکا ہے۔ بال بال قرضے میں جکڑا ہوا ہے۔ سیاست دانوں کا ایک ہجوم ہے جو پانچ برس تک الیکشن کا انتظار کرنے اور حکومت کوخدمت کا موقع دینے کی بجائے ابھی سے توپ و تفنگ سنبھال کر میدان میں اتر چکا ہے۔ میڈیا نے حکومت کو دو ہفتے بھی پورنے نہیں کرنے دیے کہ حساب کتاب شروع کردیا۔ دہشت گردی کے سائے پوری طرح چھٹے نہیں۔ کراچی، بلوچستان اور قبائلی علاقہ جات کا امن حریفوں کو ایک آنکھ نہیں بھاتا۔ وہ گھاؤ لگانے اور گھائل کرنے کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیتے۔ غیر ملکی سرمایہ کاروں کو بھگانے کے لیے چین کے ماہرین تک کو ہدف بنایا جا رہا ہے۔ اسی پس منظر میں حکومت اور قومی سلامتی کے متعلقہ اداروں کو مسلسل مشاورت اور اشتراک کے ساتھ چلنا ہوگا، تاکہ اندرونی اور بیرونی خطرات کا پامردی سے مقابلہ کیاجاسکے ۔
وزیراعظم عمران خان کے مشاورتی اجلاس اس لیے بھی اہمیت کے حامل ہیں کہ ایران اور جاپان کے وزرائے خارجہ پاکستان تشریف لاچکے ہیں۔ امریکی وزیرِ خارجہ کا دورہ بھی متوقع ہے۔ بھارت کے ساتھ بات چیت کا ڈول ڈالنے کی خاطرسازگار ماحول کی تیاری جاری ہے۔ وزیرِ خارجہ شاہ محمود قریشی افغانستان کے دورے کے لیے پر تول رہے ہیں۔ وہ عندیہ دے چکے ہیں کہ افغانستان کے حوالے سے امریکی خدشات کے اِزالے کے لیے ان کی حکومت توجہ دے گی۔ خارجہ محاذ پر وزیراعظم عمران خان کی حکومت کو علاقائی ممالک اور بالخصوص ایران اور سعودی عرب اپنی طرف راغب کرنے کی کوششوں میں مصروف ہیں۔ تزویراتی طور پر پاکستان کی حمایت یا گہری دوستی دونوں ممالک کے لیے بہت اہمیت رکھتی ہے۔ سعودی عرب پاکستان کا قابل اعتماد دوست اور حلیف رہا ہے۔ آج بھی پندرہ لاکھ پاکستانی سعودی عرب میں برسرِ روزگار ہیں۔ ایران ایک ایسا ہمسائیہ ملک ہے جس کی نو سو کلومیٹر طویل سرحد بلوچستان جیسے حساس علاقے سے ملی ہوئی ہے۔ ایران نواز لابی بھی پاکستان میں کافی بااثر اور طاقتور ہے۔ ان دونوں ممالک کے مابین عالمِ اسلام اور بالخصوص مشرقِ وسطیٰ میں سیاسی، سفارتی اور معاشی بالادستی کے قیام پر زبردست مسابقت پائی جاتی ہے۔
سعودی عر ب کے ساتھ گذشتہ دس برسوں میں تعلقات میں کوئی گرمجوشی نہیں رہی۔ آصف علی زرداری کی پیپلزپارٹی کی حکومت کو وہ ایران نوازقراردے کر کنی کتراتے تھے۔ نون لیگ کے دورِ حکومت میں بھی تعلقات کافی سردمہری کا شکار رہے۔
اس طرح سعودی شاہی خاندان کی خواہش اور مطالبہ تھا کہ پاکستان یمن کے قبائل کے خلاف سعودی عرب کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر کھڑا ہو۔ نون لیگ کی حکومت سعودی عرب کی حمایت کا ایشو پارلیمنٹ لے گئی، جہاں ایک قراداد کے ذریعے سعودی عرب فوج بھیجنے سے روک دیا گیا۔ یہ قرارداد سعودیوں کے لیے کسی بم شل سے کم نہ تھی۔ انہیں پاکستان کا یہ طرزِ عمل بہت ناگوار گزرا۔ پارلیمنٹ میں جو بحث ہوئی، اسے سعودیوں نے اپنی توہین قرار دیا۔ کیوں کہ انہیں اندازہ نہیں کہ جمہوریت کی برکت سے پارلیمانی لیڈر گفتگو میں سفارتی نزاکتوں کا خیال نہیں رکھتے۔ اتفاق سے تحریک انصاف نے بھی سعودی عرب فوج بھیجنے کی بھرپور مخالفت کی۔ گذشتہ برس عسکری تربیت کاروں کا ایک دستہ سعودی عرب بھیجا گیا، تو پی ٹی آئی نے ایک بار پھر مطالبہ کیا کہ یقینی بنایا جائے کہ یہ لوگ کسی دوسرے ملک کے خلاف جنگی کارروائیوں میں شریک نہ ہوں۔ چناں چہ سفارتی حلقوں میں تحریک انصاف پر ایران نواز پارٹی کا لیبل لگا دیا گیا۔
عمران خان الیکشن سے قبل سعودی عرب عمرہ کی ادائیگی کے لیے تشریف لے گئے، تو انہوں نے سعودی عرب کے چند اخبارات کو انٹرویوز میں کہا کہ الیکشن میں کامیابی کے بعد وہ دونو ں ممالک کے روایتی تعلقات میں مزید وسعت لائیں گے۔ چناں چہ الیکشن کے بعد سعودی سفیر وہ پہلے غیر ملکی سفارت کار تھے، جو عمران خان کو الیکشن میں کامیابی پر مبارک باد دینے بنی گالہ تشریف لائے۔ جہاں ان کی چائے اور بسکٹ سے تواضع کی گئی۔ بعد ازاں سعودی فرمانروا اور ولی عہد نے مبارک باد کے فون کیے۔




عمران خان الیکشن سے قبل سعودی عرب عمرہ کی ادائیگی کے لیے تشریف لے گئے، تو انہوں نے سعودی عرب کے چند اخبارات کو انٹرویوز میں کہا کہ الیکشن میں کامیابی کے بعد وہ دونو ں ممالک کے روایتی تعلقات میں مزید وسعت لائیں گے۔

غیر ملکی شخصیات یا ملکوں کے ساتھ تعلقات پاکستان میں ایک حساس موضوع رہے ہیں۔ حکومتوں اور اداروں کے مابین ترجیحات اور حکمت عملی پر کافی اختلاف رائے رہا ہے۔ اختلاف بعض اوقات ایک حد میں رہا اور کبھی کبھی اس نے تصاد م اور محاذ آرائی کی شکل بھی اختیار کی۔ اس کشمکش سے ملکی مفادات کو ناقابلِ تلافی زک پہنچی اور پاکستان کو خارجہ محاذ پر تنہائی کا شکار ہونا پڑا۔ اب ایک عرصے بعد تمام اداروں کے مابین ایک ابھرتاہوا تال میل نظر آتاہے، جو کہ ایک خوش کن خبر ہے۔
سیاسی حکومت کو یہ ادراک ہونا چاہیے کہ پاکستان میں گذشتہ سات دہائیوں کے دوران میں جس طرح کی گورننس رہی اور نظام میں جو خرابیاں در آئی ہیں، انہیں دور کرنے اور تمام اداروں کے درمیان ہم آہنگی پیدا کرنے کے لیے اس نے مشاورت کی جو پہل کی ہے، وہ ہی درست سمت پہلا قدم ہے۔ پیچیدہ مسائل حل کرنے کے لیے ملک کے اندر اعلیٰ سطحی فورمز بھی موجود ہیں جنہیں سرگرم کرنے کی ضرورت ہے۔ قومی سلامتی کمیٹی اور نیشنل سیکورٹی ایڈوائزر کا دفتر ایسے فورمز ہیں جن سے ماضی میں کوئی قابلِ ذکر کام نہیں لیاگیا۔
دنیا کے جمہوری ممالک، جن میں امریکہ بھی شامل ہے، عسکری سفارت کاری (Military diplomacy) کو بروئے کار لاتے ہیں۔ کئی ایک اہم معاملات میں جب اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ اور سی آئی اے جب ہاتھ کھڑے کردیتی ہے، تو امریکی جنرلوں کو میدان میں اتارا جاتاہے۔ بالغ نظر سیاست دان اور قومیں اپنے اداروں کی طاقت سے استفادہ کرتی ہیں نہ کہ ان کے مدمقابل کھڑی ہوتی ہیں۔ ادارتی مسابقت دنیا بھر میں معمول کی کارروائی ہے۔ ولی نصر پاکستان اور افغانستان پر سابق امریکی صدر بارک اوباماکے نمائندہ خصوصی رچرڈ ہالبروک کے معاون خصوصی تھے۔ انہوں نے فارن پالیسی میں لکھا کہ اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ، ہالبروک کے دفتر اور پینٹاگان کے درمیان افغان امور پر نہ صرف نقطۂ نظر اور حکمت عملی کا اختلاف تھا، بلکہ سب کے سب ایک دوسرے کو نیچا دکھانے اور اپنا نقطۂ نظر منوانے کی سرتوڑ کوشش کرتے۔ اُس وقت کے صدر اوباما کو متاثر کرنے کے لیے ہر ایک محکمہ اور وزیر سرتوڑ کوشش کرتا۔
جمہوریت کی روح ہی اختلافِ رائے میں مضمر ہے لیکن یہ اختلاف مضر رساں نہیں ہونا چاہیے۔اسے ریاست کی جڑیں کھوکھلی کرنے اور ذاتی مفادات کی آبیاری کے لیے استعمال نہیں کیا جانا چاہیے۔ وزیراعظم عمران خا ن سے امید ہے کہ وہ ملک کے اندر ادارتی ہم آہنگی پیداکرنے کی کوشش جاری رکھیں گے۔

……………………………………………..

لفظونہ انتظامیہ کا لکھاری یا نیچے ہونے والی گفتگو سے متفق ہونا ضروری نہیں۔ اگر آپ بھی اپنی تحریر شائع کروانا چاہتے ہیں، تو اسے اپنی پاسپورٹ سائز تصویر، مکمل نام، فون نمبر، فیس بُک آئی ڈی اور اپنے مختصر تعارف کے ساتھ editorlafzuna@gmail.com پر ای میل کر دیجیے۔ تحریر شائع کرنے کا فیصلہ ایڈیٹوریل بورڈ کرے گا۔




تبصرہ کیجئے